گستاخانہ خاکوں پرفرانس سے اپنے سفیرکومشاورت کیلئے بلاسکتےہیں:وزیرخارجہ

اسلام آباد(ویب ڈیسک،مانیٹرنگ ڈیسک)وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ گستاخانہ خاکوں پر

فرانس سے اپنے سفیر کو مشاورت کیلئے بلانا پڑا تو بلائیں گے پاکستان میں حالیہ دہشت گردی میں بھارت ملوث ہوسکتا ہے، بھارت سے مذاکرات اس وقت تک نہیںہوں گے جب تک مقبوضہ کشمیر میں ظلم و ستم بند نہیں ہوگا۔
نجی ٹی وی کے ساتھ انٹرویو میں وزیر خارجہ نے کہاکہ پاکستان میں دہشت گردی کی حالیہ لہر کے پیچھے دو قسم کے عناصر ہوسکتے ہیں ایک وہ قوتیں جو امن عمل میں رخنہ اندازی پیدا کرنا چاہتی ہیں جو جاسوسی کا کردار ادا کرتی آئی ہیں اور کررہی ہیں اور دوسری قوت جو اس کے پیچھے ہوسکتی ہے وہ ہمارا مشترقی پڑوسی ہندوستان ہوسکتا ہے جس نے ہمیشہ یہ کوشش کی ہے وہ اپنے اندرونی معاملات اور مقبوضہ کشمیر کی صورتحال سے توجہ ہٹانے کیلئے معاملات کو کوئی دوسرا رخ دے ۔ کورونا کی وجہ سے بھارت کی معیشت کو دھچکا لگا ہے اس سے توجہ ہٹانا چاہتا ہے ہندوستان کی ڈبل گیم نئی نہیں ہے وہ ہمیشہ چالیں چلتا آیا ہے۔ ایک طرف وہ گفت و شنید کی خواہش بھی ظاہر کرتا ہے اور دوسری طرف ایسی حرکتیں بھی کرتا ہے۔5 اگست کو بھارت نے یکطرفہ غیر قانونی اقدامات اٹھائے۔ کشمیریوں پر ظلم و بربریت کے پہاڑ توڑے جارہے ہیں
انہوں نے کہا کہ اس ماحول میں بھارت کے ساتھ کیا گفتگو ہوسکتی ہے۔ فی الحال مجھے پاکستان اور ہندوستان کے درمیان مذاکرات کا کوئی امکان دکھائی نہیں دے رہا ۔