بچوں کی محفل

 عصمت اسامہ

چڑیوں کی چہچہاہٹ اور پرندوں کی بولیاں کہیں دور سے سنائی دے رہی تھیں مگر جب دستک کی ٹھک ٹھک بھی سنائی دینے لگی تومنور کو آنکھیں

آسیہ محمد عثمان

عبداللہ بہت زہین تھا ہر سال اوّل نمبر پرآتا تھا لیکن پچھلے کٸ ہفتوں سے اسکول نہیں آرہا تھا استاد جی نے پتہ کیا تو پتہ چلا کہ پچھلے مہینے

آسیہ محمد عثمان

ازلان بہت ہی شرارتی بچہ تھا ہر روزکسی نہ کسی جانورکو تنگ کرتا کبھی کسی جانور کولات مار دیتا کبھی گلی میں گھومتی بیچاری بلّی کو رسّی سے

 عائشہ بی 

 ننھےننھےپیارے پیارے خوبصورت جنت کے پھولوں! آج  ہم قرآن کا ایک واقعہ سنیں گے۔۔۔۔۔ سب بچےتیار ہیں نا۔۔۔۔۔ !   تو پیارے

ثروت اقبال 

وہ ننھا منّا سا بہت نرم اور بالکل سفید تھا اور بہت ٹھنڈا بھی تھا ہوا میں اڑتے ہوئے اسے بہت مزہ آرہا تھا اس کے اوپر سے اور آس پاس سے

ثروت اقبال

امی! آج میں نے اسکول میں اشعرکے ساتھ لنچ کیا ہے۔اس نے بتایا کہ آج کل وہ اوراس کےگھروالے زیادہ مصروف ہیں۔ وہ کہہ رہا تھا کہ اس کے گھر

 نزہت ریاض

امی میں بڑا ہو کر بابا کی( طرح فوجی بنوں گا" یہ الفاظ تھےدس سالہ حماد کےجو اسکول جانے کے لئے تیار ہو رہا تھا اس کی امی نے اس کی

عدیلہ دلشاد

آج کی کہانی انگلینڈ کے بادشاہ "روبرٹ بروس" کی ہے روبرٹ بروس کٸ جنگوں میں شکست کے بعد افسردہ ہوکر اپنا علاقہ چھوڑ کرجنگل کی طرف

Page 1 of 3